سمندر کی شادی اور بیربل…

ایک دفعہ شہنشاہ اکبر بیر بل سے نا معلوم وجہ سے ناراض ہو گئے۔ اس نے اس کو وزیر جگہ سے ہٹا دیا۔ بیر بل سلطنت سے بغیر کسیklklklkl کو حالات کے بارے بتائے نکل گیا۔ زیادہ دن نہ گزر ے تھے کہ اکبر کو بیر بل کی عدم موجودگی کا شدت سے احساس ہوا اور اکثر اس کو یاد کرتا۔ وہ بیر بل کو واپس دربار میں لانا چاہتا تھا۔ لہذا اس نے بہت سے آدمیوں کو بیر بل کو تلاش کرنے کا کام سونپا۔ مگر کوئی فائدہ نہ ہوا۔ مگر وہ اس کو تلاش نہ کر سکے کہ وہ کہاں ہے ؟ آخر کار شہنشاہ کے ذہن میں ایک خیال آیا۔ اس نے اپنے تمام پڑوسی بادشاہوں کے نام ایک دعوت نامہ ارسال کیا۔

اس دعوتی خط میں پیغام یہ لکھا تھا کہ :۔ ’’ ہماری سلطنت کے سمندر کی شادی کی رسم ہو رہی ہے آپ سے درخواست ہے کہ اپنی ریاست کے دریاؤں کو بھیجیں کہ وہ آ کر سمندر کی عزت افزائی ک ریں۔ ‘‘ تمام بادشاہ اس دعوت نامے یا پیغام سے بڑے حیران و پریشان ہوئے۔ بہر حال اکبر شہنشاہ ان کا شہنشاہ تھا اور یہ ان کا فرض تھا کہ اس کے حکم کی تعمیل کرتے۔ مگر اس کے دعوت نامے کا جواب ایک بادشاہ کے ذہن میں آیا۔ اس نے لکھا تھا کہ :۔ ’’ ہماری ریاست کے دریا آپ کے علاقے میں جانے کیلئے تیار ہیں۔ مگر آپ کی سلطنت کے تمام کنوؤں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ وہاں دارا خلافہ میں موجود ہوں ان کا استقبال کرنے کیلئے۔ ‘‘ اس ترچھے جواب سے شہنشاہ فوری طور پر سمجھ گیا کہ بیر بل اس بادشاہ کے دربار میں ہو گا۔ اس نے اسی وقت اپنا (قاصد) بر کارہ اس بادشاہ کے پاس روانہ کیا تو بیر بل وہاں توقع کے مطابق موجود پا یا گیا۔ شہنشاہ نے اپنی غلطی کا اعتراف کیا اور بیر بل سے کہا کہ وہ وہلی واپس آ جائے اور وہ دوبارہ درباریوں میں شامل ہو جائے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s