“تمہیں تمہاری نظر لگ جائے گی “ایک لمحے کو لگا جیسے دهڑکن رک گئی ہو . اس نے بالکل سچ کہا تها ،دوپٹے نے میرے حسن کو چار چاند لگا دئے……….

پیار اور نفرت                                                                                                                                         polpol                                                                                                                                                                                میں دعا کرتا ہوں کہ اللہ تمہیں دین کی سمجهہ عطا کرے یامجهے تم سے بے نیاز کردے.
وہ بڑے ٹهوس لہجے میں بولا ،تو میں ہنسنے لگی
تم ایسا کبهی نہیں کر سکو گے ،کیونکہ تم مجهہ سے بے پناہ محبت کرتے ہو .
بڑے زعم سے بولا ،خدا کی محبت کے سامنے تمہاری محبت کچهہ بهی نہیں ،اگر تم نے اپنی روش نہ بدلی اوریہ آدهے ادهورے لباس پہننے نہ چهوڑے تومیں تمہیں چهوڑ دوں گا
مجهے چهوڑ کر اکیلے ہو جاو گے ،
نہیں ،میرا اللہ مجهے تم سے بہتر عطا کردے گا .اسنے بڑے مان سے کہا تو میں لا پروائی
سے بولی .
چهوڑو یہ جزباتی باتیں ،فضول میں غصہ کرتے ہو ، میری بات اسے بری لگی اور وہ اٹهہ کر چلا گیا ،
میرا کزن تها وہ ،ہر دوسرے تیسرے دن مجهہ سے اسی بات پر جهگڑتا .پیار ،محبت ،ہمدردی،غصہ ،غرض ہر طریقے سے وہ مجهے سمجهاتا رہا ،لیکن میرے لئے دنیا کی رنگینیاں اور رعنائیاں اس کی نصیحتوں سے بہت بڑهہ کرتهیں ،اس لئے
میں نے اس کی باتوں پر کبهی سنجیدگی سے نہیں سوچا .
اور پهر وہ واقعی مجهہ سے بے نیاز ہو گیا ،بیزار ہو گیا .
اس نے جلد ہی شادی کرلی ،اللہ نے اپنا وعدہ پورا کیا ،نیک مرد کو نیک بیوی مل گئی ،
شادی کے بعد اس نے ہماری طرف آنا بہت کم کر دیا ، قابل رشک زندگی تهی اس کی
وقت کے ساتهہ ساتهہ ہر چیز اپنی کشش کهو دیتی ہے ،
میرے ساتهہ بهی ایسا ہی ہوا ،جب دنیا کی رنگینیوں سے خوب لطف اندوز ہو چکی تو آہستہ آہستہ ان سب چیزوں سے دل بیزار ہونے لگا ،اندر ایک گهٹن سی سیرائت کر گئی
ہر سال عید کی تیاری بڑے جوش وخروش سے کرتی تهی اس بار دل بجها بجها سا تها .
بازار گئی اور ایک پشواز سوٹ خرید لائی .
بہت ہی خوبصورت جوڑا تها ،اور اسکے ساتهہ بے انتہا جازب نظر رنگوں کی کڑهائی کا
بڑا سا نفیس دوپٹہ ، دوپٹہ !! جو میں نے زندگی میں کبهی لیا ہی نہیں تها ،
کهول کر سامنے رکها تو آنکهیں بهیگ گئیں .
کانوں میں رس گهولتی ایک آواز آئی ،”کبهی دوپٹہ اوڑهہ کر آیئنہ دیکهنا ،تمہیں تمہاری ہی
نظر لگ جائے گی “اس نے بہت پہلے کہا تها اور میں نے دل کهول کر اس کا مذاق اڑایا تها .
ہاتهہ بڑها کر دوپٹہ کهولا اور آہستہ سے سر پر اوڑهہ لیا ، نرم قدموں سے چلتی آیئنے کے سامنے کهڑی ہو گئی ،
وہی آواز پهر آئی ،”تمہیں تمہاری نظر لگ جائے گی “ایک لمحے کو لگا جیسے دهڑکن رک گئی ہو .
اس نے بالکل سچ کہا تها ،دوپٹے نے میرے حسن کو چار چاند لگا دئے ،آج احساس ہوا کہ
خود کو پانے کی جستجو میں ، میں نے کیا کچهہ کهو دیا ،
آنکهیں خشک کرنے لگی تو ایک آواز پهر ابهری ،”اللہ! مجهے اس سے بے نیاز کر دے”
رکی ہوئی دهڑکن ایک بار پهر تیز ہو گئی .شرمندگی ،ندامت اور پچهتاوے نے سر جهکا دیا .
دل نے کہا ،”جس راستے پر چلنے کی خواہش کی تهی ،اللہ نے تمہیں اسی راستے پر چلا دیا .اب پچهتاوا کس بات کا ؟؟
آنسو لگاتار گرنے لگے تو بےبسی سے پلٹ آئی .
تیار ہو کر باہر آئی تو وہ ڈرئنگ روم سےنکل رہا تها ،شائد امی ابو سے عید ملنے آیا تها .
میں نے بڑهہ کر راستہ روک لیا اور کہا .”دیکهو! میں نے دوپٹہ اوڑها ہے ،تعریف نہیں کرو گے کیا؟
منہ پهیر کر بے رخی سے بولا ،”تم یہ حق کهو چکی ہو ”
میں نے التجا کی ،”اس بے پناہ محبت کے صدقے ،جوکبهی تمہیں مجهہ سے تهی ،”
نفرت سے میرا ہاتهہ جهٹک کر کہنے لگا ،
سنو ! جو محبت بے مثال کرتے ہیں ،وہ نفرت بهی با کمال کرتے ہیں ،
وہ لہجہ ،وہ انداز ،وہ نظریں ، میں آج تک نہیں بهول سکی ،
کمال کی نفرت تهی اس کی ،جو میرے لئے توبہ کا دروازہ کهول گئی ،
اور پهر مجهے سجدوں میں لطف آنے لگا !!

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s