“ﺍﺱ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺷﺎﻡ ہوﺗﮯ ہی ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮہر ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟﺑﯿﭩﮭﯽ رہتی، ﺟﯿﺴﮯ ہی وہ شخص………

ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﯿﺮ ﮐﺮ ﺭہا ﺗﮭﺎ، ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﺱ ﮐﯽﻧﻈﺮ ﺍﯾﮏ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﭘﺮ ﭘﮍﯼ ﺟﻮ ﺯﻣﯿﻦ ﺳﮯ ﺍﯾﻨﭧ ﭘﮭﯿﻨﮑﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﺍﯾﻨﭧ ہوﺍ ﻣﯿﮟ ﻗﻼﺑﺎﺯﯾﺎﮞ ﮐﮭﺎﺗﯽ ہوﺋﯽ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ جا پہنچتی.

ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺍﻥ ہو ﮐﺮ ﻭﺯﯾﺮ ﺳﮯ پوچھا کہ ﮐﯿﺎ ﻭجہ ہے ﮐﻪ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﮮ ہو ﮐﺮ ﭘﮭﯿﻨﮑﯽ ہوﺋﯽ ﺍﯾﻨﭧ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ پہنچ جاتی ہے…

ﮐﯿﺎ ﯾﻪ ﺍﺗﻨﺎ ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ہے؟؟

ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺳﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ﮐﻪ:

ﺣﻀﻮﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻃﺎﻗﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﻋﻤﻞ ﮐﺎﺭﻓﺮﻣﺎہے،ﺍﮔﺮ ﺟﺎﻥ ﮐﯽ ﺍﻣﺎﻥ ﭘﺎﺅﮞ ﺗﻮ

ﻋﺮﺽ ﮐﺮﻭﮞ؟

ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﮐﮩﻮ ﮐﯿﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﭼﺎہتے ہو؟

ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ: ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺳﻼﻣﺖ،ﺿﺮﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮔﮭﺮﯾﻠﻮ ﺯﻧﺪﮔﯽ بہت ﺍﭼﮭﯽ ﮔﺰﺭ رہی ہوگی،ﺍﺳﮯﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽﻻﺣﻖ نہیں ہوگی. ﺍﺳﯽ وجہ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽﺍﯾﻨﭧ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ پہنچ جاتی ہے.

ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﻪ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ.

ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺟﯽ ﺣﻀﻮﺭ.

ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺭﻭﺯ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﭼﻨﺪ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﻮ ﺗﺤﻘﯿﻖ پر ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ.

ﺍﯾﮏ ہفتہ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻥ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﻧﮯ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ کہ

“ﺍﺱ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺷﺎﻡ ہوﺗﮯ ہی ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮہر ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟﺑﯿﭩﮭﯽ رہتی ہے، ﺟﯿﺴﮯ ہی وہ شخص

ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻗﺪﻡ ﺭﮐﮭﺘﺎ ہے ﺍﺱ ﮐﯽﺑﯿﻮﯼ ﻧﮩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻓﻮﺭﺍ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽﺑﺎﻟﭩﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﺌﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﺭﮐﮭﺘﯽ ہے،ﻣﺰﺩﻭﺭ ﺟﯿﺴﮯ ہی ﻧﮩﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻓﺎﺭﻍ ہوﺗﺎ ہے،یہ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎﻟﮕﺎﺩﯾﺘﯽ ہے، ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﻤﺎﻝ ﺍﺣﺘﯿﺎﻁ ﺳﮯ ﭘﮑﺎﺗﯽ ہے ﻧﻤﮏ ﻣﺮچ اور مصالحہ جات کے تناسبﮐﺎ ﺧﺎﺹ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﺘﯽ ہے،ﮐﮭﺎﻧﮯﺳﮯ ﻓﺎﺭﻍ ہوﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻟﯿﭩﻨﮯ ﮐﮯﻟﯿﮯ ﺑﺴﺘﺮ ﻟﮕﺎﺗﯽ ہے، ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﻫﺮ ﮐﻮ ﭘﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯﺩﻭﺩﮪ ﺩﯾﺘﯽ ہے.ﮐﺴﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﮐﺎﺫﮐﺮ نہیں ﮐﺮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺻﺒﺮ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻟﯿﺘﯽ ہے”.

ﺟﺐ یہ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﭘﯿﺶ ہوﺋﯽ ﺗﻮ ﻭﻩ ﻣﺰﯾﺪ ﺣﯿﺮﺍﻥ ہوا… ﺍﺱ ﻧﮯ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ کہ ﺍﻥ ﮐﮯﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﮐﭽﮫ ﺭﻧﺠﺶ اور چپقلش ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻭ ﭘﮭﺮ ﺩﯾﮑﮭﯿﮟ ﮐﯿﺎ نتیجہ نکلتا ہے.ﭼﻨﺎﻧﭽﻪ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ خاتون کی ملنے جلنے والی عورتوں کی مدد سے ﺍﯾﺴﺎ ہی کروادیا.

ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ بات ڈالی کہ تمہارے ﺷﻮہر ﮐﮯ غیر ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﺗﻌﻠﻘﺎﺕ ہیں. ﺑﺲ ﭘﮭﺮ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ.

ﺷﺎﻡ ﮐﻮ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﺟﻮﮞ ہی ﮔﮭﺮ پہنچا ﺗﻮ نہاﻧﮯﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﻟﭩﯽ تھی نہ ہیﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ہے، نہ ہی ﺳﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﺴﺘﺮ… ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﯿﻮﯼ ﺳﮯ ﻭجہ ﭘﻮﭼﮭﯽ ﺗﻮ ﻭﻩ ﻟﮍﻧﮯ مرنے ﮐﻮ تیار ہوگئی،

ﻣﺰﺩﻭﺭ ﻧﮯ بہت ﺻﻔﺎﺋﯽ ﭘﯿﺶ ﮐﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﯿﻮﯼ ﺗﮭﯽ کہ ماننے کو تیار ہی نہ ہوئی…

ﭼﻨﺪ ﺩﻥ ﯾﻪ ﻗﺼﻪ ﯾﻮﮞﻫﯽ ﭼﻠﺘﺎ ﺭﻫﺎ.

ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻭﺯﯾﺮ ﻧﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﮐﻪﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﺳﻼﻣﺖ ﻫﻢ ﺳﯿﺮ ﭘﺮ ﭼﻠﺘﮯﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺖﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ.ﺑﺎﺩﺷﺎﻩ ﻭﺯﯾﺮ ﺳﻤﯿﺖ ﺳﯿﺮ ﭘﺮ ﻧﮑﻼ ﺍﻭﺭﺍﺳﯽ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﻬﻨﭽﮯ ﺗﻮ ﮐﯿﺎﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﻻﮐﮫﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﻫﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﻨﭧ پہلی ﻣﻨﺰﻝ ﺳﮯ ﺍﻭﭘﺮ نہیں ﺟﺎﺗﯽتھی…

ﺑﺎﺩﺷﺎﺩﻩ ﻭﺯﯾﺮ ﮐﯽ ﻓﻬﻢ ﻭﻓﺮﺍﺳﺖ ﮐﻮﻣﺎﻥ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﻫﻮﮔﯿﺎ ﮐﻪﺍﯾﻨﭧ ﮐﻮ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ ﻃﺎﻗﺖ ﻧﻬﯿﮟ ﺑﻠﮑﻪ انسان کی ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﭘﮩﻨﭽﺎتی ﻫﮯ.

ﻗﺼﻪ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﮐﻪ ﻣﺰﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮐﻪ ﯾﻪﺳﺐ ﺗﻤﻬﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﮈﺭﺍﻣﻪ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎﺗﮭﺎ، ﺟﺐ ﺍﺳﮯ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﻌﻠﻮﻡﻫﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﻭﻩ ﺧﻮﺵ ﻫﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮﻭﻫﯽ ﺷﻮﻫﺮ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ،ﺍﻭﺭ ﻭﻫﯽﺍﯾﻨﭧ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﺮ.

ﺣﻘﯿﻘﺖ ﯾﻬﯽ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺟﻮ ﺷﺨصﮔﮭﺮﯾﻠﻮ ﭘﺮﯾﺸانیوﮞ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﻫﮯ ﺍﻭﺭﺟﻦ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺷﺤﺎﻟﯽ ﻫﮯﺗﺮﻗﯽ ﺍﻧﻬﯿﮟ ﮐﮯ ﻗﺪﻡ ﭼﻮﻣﺘﯽ ہے.ﻟﻬﺬﺍ ﻫﻤﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭼﺎﻫﯿﮯ ﮐﻪ اپنے ارد گرد ﮐﺎ ﻣﻮﺣﻮﻝ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﺭﮐﮭﯿﮟ…!!! خوش رہیں اور خوشیاں بانٹیں…
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s