”مجھے ایک ہفتے تھانے میں رکھا جس دوران بیئر کی بوتل اور مرچیں میرے نازک۔۔۔“ استغفر اللہ! نوجوان لڑکی کیساتھ انتہائی شرمناک حرکت، شیطان نے بھی ”ہاتھ کھڑے“ کر دئیے

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے مظالم کی کہانیاں تو اب زبان زدعام ہیں مگر مقبوضہ کشمیر کی ایک نوجوان لڑکی کے ساتھ پولیس افسر کی ایک ایسی انتہائی شرمناک حرکت سامنے آئی ہے کہ شیطان نے بھی ”ہاتھ کھڑے“ کر دئیے ہیں جبکہ تفصیلات جان کر آپ کا خون بھی کھول اٹھے گا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق مقبوضہ جموں و کشمیر کی ایک نوجوان لڑکی نے کہا ہے کہ کناچک پولیس سٹیشن کے ایس ایچ او نے اسے گرفتار کیا اور پھر تھانے لے جا کر زبردستی اس کے کپڑے اتار کر جنسی طور پر ہراساں کیا۔ اس نے مزید کہا کہ گرفتاری کے دوران پولیس والوں نے شرم و حیاءکی تمام حدیں پار کرتے ہوئے بیئر کی بوتل اور مرچیں اس کے نازک اعضاءمیں داخل کیں۔
غیر ملکی خبر رساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے متاثرہ لڑکی کے وکیل نے کہا کہ یہ واقعہ بالکل دہلی ریپ واقعے جیسا ہے۔ دوسری جانب سٹیٹ منسٹر جتندر سنگھ نے مقبوضہ جموں و کشمیر گورنمنٹ کو فوراً معاملے کی تحقیقات کا حکم دیاہے۔ 25 سالہ متاثرہ لڑکی کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ چند روز قبل پیش آیا جب اس کے مالکان نے چوری کا جھوٹا الزام لگا کر اسے گرفتار کروا دیا۔ اس کا کہنا ہے کہ کناچک پولیس سٹیشن کے ایس ایچ او راکیش شرما نے اسے ایک ہفتے تک قید رکھا اور تشدد کا نشانہ بناتا رہا۔
متاثرہ لڑکی نے غیر ملکی خبر رساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ قید کے دوران اسے کھانے کیلئے کچھ نہیں دیا جاتا تھا اور جب وہ پانی مانگتی تھی تو اسے پیشاب پینے کا کہا جاتا تھا۔

متاثرہ لڑکی کا یہ بھی کہنا ہے کہ پولیس والوں نے اس کی ماں، باپ، شوہر اور بچوں کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا جبکہ اسے بھی چوری کے جھوٹے الزام میں پھنسایا گیا۔ واضح رہے کہ متاثرہ لڑکی کو 6 مئی کو ضمانت پر رہا کر دیا گیا تھا جبکہ اس معاملے کی چھان بین کیلئے تحقیقاتی ٹیم تشکیل دیدی گئی ہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s