عمران ، سیتا وائٹ اور ٹیریان کی مکمل کہانی .قسط نمبر3

Image result for vanity fair story on imran khan and sita white

یہ فیچر دینا کے معروف میگزین “وینٹی فیئر، نیویارکِ میں شائع ہوا ہےجس کی صداقت کے بارے میں اتنا ہی کہنا کافی ہے کہ آج تک عمران خان نے اس کے خلاف کوئی ایکشن نہیں لیا-دلچسپ امر یہ ہے کہ سنا ہے جمائما بھی آج کل اسی میگزین کے ساتھ وابستہ ہیں- سیتا وائٹ اور عمران خان کی یہ مکمل سٹوری اسی میگزین سے ترجمہ کی گئی ہے ، قارئین کے لیے پیش خدمت ہے- ہماری کوشش ہے کہ آپ کو روز اس کی ایک قسط پڑھنے کو مل سکے- شکریہ (ادارہ دنیا پاکستان) بشکریہ وینیٹی فیئر میگزین -نیویارک


قسط نمبر 1 پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

قسط نمبر 2 پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

سیکس بیز متعدد مقدمات میں ملوث رہا ہے۔رچرڈ ، کی سٹون انرجی سروسز کارپوریشن کا چیف ایگزیکٹو اوفیسر تھا۔ یہ کمپنی الیکٹرک سروسز فراہم کرتی ہے۔یہاں اس پر الزام لگا کہ اس نے اپنے سٹاک کی ٹریڈنگ کی قیمت بڑھا دی تھی، جس کے نتیجے میں مقدمہ کرنے والے سٹاک ہولڈروں نے فیصلہ کیا کہ وہ معاملے کو مزید آگے نہیں بڑھائیں گے کیونکہ ان کی جانب سے اپنی نمائندگی کیلئے ہائر کردہ وکیل، لوینل گلانسی کے مطابق، ’’کوئی یقین دہانی نہیں کرائی جا سکتی تھی کیونکہ اب اس کے پاس کسی کو کچھ دینے کیلئے بچا ہی نہیں تھا۔ ‘‘ تاہم سیکس بیز سے جب ہم نے اس بارے میں اپنے تاثرات دینے کو کہا تو انہوں نے کوئی جواب نہ دیا۔ وکٹوریہ کی جانب سے تعارف کروایا جانے کے بعد، سیکس بیز اور سیتاناقابل بیان رفتار سے اتنے قریب آگئے کہ انہیں علیحدہ کرنا ناممکن نظر آنے لگا۔ کیرولینا نے نہایت روایتی منی منجمنٹ کمپنیوں سے رابطہ کیا۔تاکہ ان سے یہ معلوم کر سکے کہ وہ اپنے 3ملین ڈالر سے کیا کام کرے؟

Image result for sita white and carolina
یہاں تک کہ سیتا اور کیرولینا نے لوکاس کے خلاف ایک مشترکہ رٹ بھی دائر کر دے۔ ان دونوں کا ایک دوسرے سے رشتہ بھی اتار چڑھاؤ کا شکار رہتا۔دراصل، کیرولینا، جو اب نہایت اطمینان سے وسطی کیلی فورنیا میں ایک فارم ہاؤس میں رہتی ہے، نے اپنے ایک دوست کو بتایا تھا کہ اس نے اور سیتانے، سیتا کی موت سے صرف ایک ماہ قبل مصالحت کی تھی۔
فروری میں، سیتا اور کیمرون سیکس بی نے لاس انجلس میں الزبتھ نکسن،ماہرِ امورِ اسٹیٹ پلاننگ کے دفتر کا دورہ کیا۔اس 36سالہ سرخ بالوں والی منہ پھٹ وکیل کے یہاں ان کے جانے کا مقصد سیتا کی نصیحت تیار کرانا اور سیتا کیلئے ایک ٹرسٹ قائم کرنا تھا۔

اس وصیت میں، 27فروری 2004ء کو سیتا نے کیمرون کو اپنا مختار اور ٹیرن کا سرپرست بنا دیا۔سیتا کے ٹرسٹ میں، کیمرون کا نام بطور معاون سرپرست درج کر دیا گیا۔اس وقت سیتا کو سیکس بیز کو جانتے ہوئے ابھی4ہفتوں سے بھی کم عرصہ ہوا تھا۔ اس وصیت میں اس نے یہ بھی واضح کر دیا کہ مندرجہ ذیل میں سے کوئی بھی میری بیٹی کا سرپرست نہیں ہو گا:
’’میری ماں، الزبتھ کیلن ڈی وازکویز، میری بہن، کیرولینا ٹریسا وائٹ، میرا بھائی، لوکاس چارلس وائٹ، میری سوتیلی ماں وکٹوریہ ان وائٹ، جو وکٹوریہ وائٹ اوگاراکے طور پر معروف ہے ، اور نہ ہی عمران خان یا پیٹر سوین نیلسن(نِکسن کے بقول، پیٹر اس وقت سیتا کا بوائے فرینڈ تھا۔)
اس ملاقات میں، اور اس کے بعد کی ملاقاتوں میں، کیمرون کے متعلق کسی بات نے نکسن کوپریشان کیا ۔ اس نے سیتا سے پوچھاکہ کیا اس کا کوئی اور دوست نہیں ہے؟ اور یہ کہ وہ اس شخص کو اتنا زیادہ اختیار کیوں دے رہی تھی؟

نکسن نے سیتا کو لاس اینجلس کے ایک سرٹیفائیڈپبلک اکاؤنٹنٹ، وینڈی برلن سے ٹیکس ایڈوائس لینے کیلئے بھیجا لیکن برلن نے صرف ایک ملاقات کے بعد ایک کلائنٹ کے طور پر سیتا کو ڈیل کرنے سے انکار کر دیا کیونکہ ،برلن کے بقول، ان کی میٹنگ میں بھی اور فون پربھی، کیمرون ہمیشہ موجود ہوتا تھااور وہ بے حد بدتمیز اور جارحانہ بھی تھا۔برلن کا کہنا ہے، ’’کبھی اس وجہ سے اور کبھی اس وجہ سے، کیمرون سیکس بی سیتا کو لیکچر دیتا رہتا یہاں تک کہ سیتا قطی طور پر اپنی زندگی میں آنے والے ہر شخص کے خلاف ہوجاتی اور اسے برا بھلا کہنا شروع کر دیتی: اپنی سوتیلی ماں کو، اپنی ماں کو، اپنے بھائی کو، اپنی بہن کو۔۔۔‘‘اپنی موت سے ایک روز پہلے، سیتا نے برلن کو کال کی اور اپنی اور کیمرون، دونوں کی طرف سے معذرت کی۔اپنے اور کیمرون کے رویوں پر اظہار ندامت کیااور اگلے روز ملاقات کیلئے وقت لیا۔

Image result for sita white and carolinaیکم اپریل کو، سیتا اور کیمرون نیویارک میں کوربلیز سے ملے۔ رینی کے بقول، کیمرون نے سیتا کے گالوں پر عجیب سے نسواری نشان ڈال دئیے تھے اور سیتا نے خود کو بطور ایلزبتھ مارکس متعارف کروایا۔بعد میں، گھبرائی ہوئی سیتا نے دعویٰ کیا کہ کیمرون نے اس سے کہا تھا کہ وہ میٹنگ میں فرضی نام کے ساتھ جائے۔میٹنگ کے دوران بھی ، سیتا کویہ جاننے کیلئے ’’ٹام‘‘(کیمرون) کی نصیحتوں کی ضرورت پڑتی رہی کہ وہ مزید پیسے دینے پر لوکاس کو کس طرح تیار کرے۔وہ مایوس نظر آتی تھی۔

نکسن کہتا ہے، ’’اس کی شکل و صورت فروری اور مئی کے درمیان ڈرامائی حد تک تبدیل ہو گئی ہے۔ وہ بہت زیادہ کمزورہو گئی ہے۔‘‘
’’ٹام‘‘ نے اسے بتایا کہ وہ اسے سوچ کر بتائے گا کہ اسے کس طرح آگے بڑھنا چاہئے۔ لیکن سیتا کسی قدر بے صبری قسم کی خاتون تھی۔ واپس، لاس اینجلس میں، اس نے دو خطوط ڈرافٹ کئے اور جورج ہرلِک کو فیکس کر دئیے۔ وہ نیو یارک میں ٹام کا ایک نوجوان ساتھی تھاجس کے متعلق ٹام نے اسے بتایا تھا کہ وہ اس پر اعتبار کر سکتی ہے۔
ان دونوں میں سے پہلا خط لوکاس کے نام تھا، جس میں درج تھا:
پیارے بھائی؛ لوکاس،
تقریباً 9برس کی اذیت بلآخر اپنے اختتام کو پہنچتی ہے۔مجھے یہ سوچ کر جتنا زیادہ اچھا محسوس ہو رہا ہے کہ ہم اس دور کو پیچھے چھور آئے ہیں، اتنا ہی میں یہ سوچ کر اداس ہو جاتی ہوں کہ ہمارے درمیان جذباتی تعلق مفقود ہے۔
میں جانتی ہوں کہ تمہارے پاس تمام ذرائع موجود ہیں اور مجھے ہمیشہ یقین رہا کہ تم ہمیں بچانے کیلئے آؤ گے اور درست اقدام اٹھاؤ گے۔
مجھے بہت حیرانی ہو گی اگر مجھے یہ یقین آجائے کہ تم واقعی ان تمام آزمائشوں سے واقف رہے ہو جو ہمیں برداشت کرنی پڑتی رہی ہیں۔اور بہرحال، تم نے جانتے بوجھتے ہوئے میری اور میری بیٹی ٹیرن کی جانب ہمیشہ پشت کئے رکھی ہے۔‘‘)’’تم نے نیک دلی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کسی ہمدردی کا اظہار نہ کیا حالانکہ تمہارے پاس ہماری تکالیف کو ختم کرنے کیلئے معاشی وسائل موجود تھے۔
ہمیں اپنے ذاتی گھروں میں خانہ بدوشوں کی طرح رہنے پر مجبور کر دیا گیااور ہم بڑے نقصانات سے بچنے کیلئے ایک سے دوسرے کمروں تک بھٹکتے رہنے پر مجبور ہو گئے۔میں نے تم سے کتنی بار درخواست کی کہ خاندان کے ٹرسٹ کے سربراہ کے طور پرمجھے ٹیکسوں اور دیگر معاملات کے حل کیلئے مطلوب فنڈز مہیا کر دو ، جو اب بڑھ کر تقریباً ایک ملین ڈالر تک جا پہنچے ہیں۔۔۔
اس سلسلے میں ایک ہاتھ سے لکھا ہوا فٹ نوٹ بھی موجود ہے:
میں نے تم سے کہا کہ6 ملین دے دو اور ہرچیز پر دستخط کر دواور تم نے کہا کہ دستخط تمہیں کرنے پڑیں گے۔۔۔ تاہم کچھ بھی نہ ہوا”۔
(لوکاس کے وکلاء میں سے ایک کے بقول، سالہا سال تک لوکاس نے فیاضی کے ساتھ اپنی بہن کی مدد کی۔ لوکاس کے ترجمان نے کہا، ’’جیسا کہ آپ ایک بھائی سے توقع کرتے ہیں، وہ وقتاً فوقتاً اپنی بہن کی مدد کرتا رہا تھا۔)

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s