بالی وڈ اداکارہ کا اپنی مرضی سے جنسی فعل کرنے کا اعتراف

بالی وڈ اداکارہ کلکی کوشلن نے اپنے ناخوشگوار تجربے کے متعلق ایک مختصر کہانی سنائی۔ ’’میں نے 9برس کی عمر میں کسی کو اجازت دی کہ وہ میرے ساتھ سیکس کرے۔ مجھے مکمل طور پر معلوم نہ تھا کہ یہ کیا ہوتا ہے۔ اور سیکس کر چکنے کے بعد میرا سب سے بڑا خوف یہ تھا کہ میری ماں کو معلوم ہو جائے گا۔ میں نے یہ محسوس کر لیا کہ یہ میری غلطی تھی۔ لہٰذا میں نے کئی برس تک اس بات کو خفیہ رکھا۔اگر میرے اندر اپنے والدین کو بتانے کا حوصلہ ہوتا تو میں اپنے ذاتی جنسی رجحان کے متعلق سالوں تک کمپلیکس کا شکار رہنے سے بچ جاتی۔ یہ ضروری ہے کہ والدین لفظ ’’سیکس‘‘ یا خفیہ اعضائے جسم کے گرد ایک حصار قائم کر نا چھوڑ دیں تاکہ بچے کھل کران پر بات کر سکیں اور ممکنہ جنسی تشدد سے خود کو بچا سکیں۔‘‘

orrr.jpg

ہرچند کہ 31سالہ فنکارہ نے اپنے جنسی مسئلے کی تفصیل میں جانے سے گریز کیالیکن انہوں نے یہ ضرور بتایا کہ جس مسئلے سے وہ گزریں، اس سے ان کے کئی ساتھیوں کو بھی گزرنا پڑا۔ کلکی نے مزید کہا، ’’ہم میں سے بہت سے اس مسئلے سے گزر چکے ہیں اور زیادہ تر لوگ، جنہیں میں جانتی ہوں، بالخصوص میری کئی قریبی واقف خواتین، بچپن میں ہونے والے جنسی تشدد سے گزر چکی ہیں۔یہ اتنا شدید مسئلہ ہے کہ میرے خیال میں، یہ کوئی نظرانداز کیا جا سکنے والا معاملہ نہیں ہے۔ جنسی تشدد سے نمٹنا ہے تو سب سے اہم یہ ہے کہ اس موضوع کے گرد موجود حصار کو ختم کیا جائے اور اسے چھپانا بند کیا جائے۔‘‘
بچوں پر جنسی تشدد کے موضوع پر منعقدہ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کلکی نے مزید کہا، ’’بعض اوقات یہ اہم ہوتا ہے کہ اس مسئلے پر بات کی جائے۔ جب کہ بعض اوقات آپ کوخاندان کے کسی ایسے رکن یا ایک ایسے ماہر نفسیات یا ایک سماجی نظام یا تنظیم کی ضرورت ہوتی ہے جس پر آپ اعتبار کر سکیںیا جوان معاملات میں آپ کی مدد کر سکے۔ مسئلہ یہ ہے کہ ہمارے پاس عملدرآمد کیلئے کوئی قابل اعتبار فرد یا ادارہ موجود نہیں ہوتا۔‘‘

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s